چین کا پاکستان میں 2 بڑے منصوبوں پر کام روکنے کا اعلان

0
57

پاکستان میں 5 چینی انجینئرز کی ایک خودکش دھماکے میں ہلاکت کے بعد چین نے پاکستان میں 2 بڑے منصوبوں پر کام روکنے کا اعلان کیا ہے ۔

اس سلسلے میں کہا گیا ہے کہ چینی کنٹریکٹرز نے پاکستان میں دو بڑے ڈیم منصوبوں پر تعمیری کام روک دیا ہے۔

یہ اعلان ایک ڈیم کی تعمیر میں شامل کارکنوں پر حالیہ خودکش بم حملے میں پانچ چینی انجینیئرز اور ایک پاکستانی ڈرائیور کی ہلاکت کے بعد کیا گیا ہے۔

خبر رساں ادارے اے ایف پی کی رپورٹوں کے مطابق پاکستان میں دو بڑے ڈیم منصوبوں کی تعمیر روک دینے کا اعلان منگل چھبیس مارچ کو پاکستان میں تعمیراتی کام کرنے والے چینی انجینیئرز کی ایک گاڑی پر ہونے والے ہلاکت خیر حملے کے پس منظر میں کیا گیا ہے۔

جمعے کو پاکستانی اہلکاروں نے اس خبر کی تصدیق کرتے ہوئے کہا کہ چین نے اس ہلاکت خیز حملے کے بعد ڈیموں کی تعمیر کے دو منصوبوں پر کام روک دیا ہے۔

ایک صوبائی اہلکار نے بتایا کہ چینی کمپنیوں نے پاکستانی حکام سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ ان تعمیراتی سائٹس کو جہاں قریب ایک ہزار دو سو پچیس چینی شہری کام کرتے ہیں، دوبارہ کھولنے سے پہلے نئے سکیورٹی پلان پیش کریں۔ پاکستان میں چینی کارکنوں کی سلامتی دونوں ممالک کے لیے بڑی تشویش کا سبب بنی ہوئی ہے۔

صوبے خیبر پختونخوا کے محکمہ داخلہ کے ایک سینیئر اہلکار نے اپنا نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر اے ایف پی کو بتایا کہ بدھ کے روز چائنہ گیزوبا گروپ کمپنی نے صوبے میں داسو ڈیم اور پاور چائنہ نے دیامیر بھاشا ڈیم پر کام روک دیا۔ اس حکومتی اہلکار نے کہا، انہوں نے حکومت سے نئے سکیورٹی پلان کا مطالبہ کیا ہے۔‘‘

اس اہلکار کا مزید کہنا تھا، تقریباً 750 چینی انجینیئر داسو ڈیم پروجیکٹ سے منسلک ہیں جبکہ 500 دیامیر بھاشا ڈیم پر کام کر رہے ہیں۔‘‘

صوبائی محکمہ داخلہ کے اس سینیئر اہلکار کے مطابق چینی انجینیئروں کی نقل و حرکت ان کمپاؤنڈز تک محدود کر دی گئی ہے جہاں وہ رہتے ہیں، متعلقہ سائٹس کے قریب ہی۔ چین نے اس پیش رفت پر اب کوئی تبصرہ نہیں کیا لیکن اسی ہفتے بار بار پاکستان پر زور دیا تھا کہ وہ اپنے ہاں چینی شہریوں کی حفاظت کو یقینی بنائے۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here