چمن: افغانستان وپاکستانی فورسزمابین فائرنگ وجھڑپ، 6 افراد ہلاک،متعددزخمی

0
95

بلوچستان کے افغانستان سے منسلک سرحدی علاقے چمن میں پاکستانی و افغانستان فورسزمابین سرحد پار فائرنگ و جھڑپ کے باعث 6افرادہلاک جبکہ متعدد افراد کے زخمی ہونے کی اطلاعات ہیں۔

زخمیوں کو سول ہسپتال چمن منتقل کیا گیا۔

حکومت بلوچستان کی جانب سے ایمرجنسی نافذ کردی گئی ہے اور ہسپتالوں میں عملہ طلب کرلیا گیاہے۔

ذرائع کے مطابق افغان فورسز کی جانب سے فائرنگ اور گولہ باری کے باعث ابھی تک 6 افراد کی ہلاکت کی اطلاعات ملی ہیں جبکہ 17 افراد زخمی ہیں جنہیں ہسپتالوں میں طبی امداد دی جارہی ہے۔

پاکستانی میڈیا میں رپورٹ ہونے والے خبروں کے مطابق افغان بارڈر فورسز نے بلوچستان کے ضلع چمن میں شہری آبادی پر توپ خانے/مارٹر سمیت بھاری ہتھیاروں سے بلااشتعال اور اندھا دھند فائرنگ و گولہ باری کی جس کے نتیجے میں 6 شہری ہلاک اور 17 افراد زخمی ہو گئے۔

پاکستانی فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر) کے مطابق پاکستان کی بارڈر فورسز نے جارحیت کے خلاف ناپ تول کرکے مناسب جواب دیا لیکن علاقے میں معصوم شہریوں کو نشانہ بنانے سے گریز کیا۔

آئی ایس پی آر کے مطابق پاکستان نے صورتحال کی سنگینی کو اجاگر کرنے کے لیے کابل میں افغان حکام سے بھی رابطہ کیا ہے اور مستقبل میں اس طرح کے کسی بھی واقعے کو روکنے کے لیے سخت کارروائی کا مطالبہ کیا ہے۔

قبل ازیں، ڈسٹرکٹ پولیس افسر (ڈی پی او) چمن عبداللہ علی کاسی نے ڈان ڈاٹ کام کو بتایا تھا کہ چمن میں پاک-افغان سرحد پر افغانستان سے ایک مارٹر گولہ پھینکا گیا جس کے بعد فائرنگ کا سلسلہ شروع ہوا۔

عبداللہ علی کاسی نے بتایا کہ افغانستان سے چمن میں مارٹر گولہ گرنے اور فائرنگ کے نتیجے میں کئی افراد جاں بحق جبکہ متعدد زخمی ہوگئے، جنہیں ڈسٹرکٹ ہیڈ کواٹر (ڈی ایچ کیو) ہسپتال چمن منتقل کیا گیا، زخمیوں میں 4 کی حالت تشویش ناک ہے، جنہیں کوئٹہ منتقل کردیا گیا ہے۔

ڈی پی او نے بتایا کہ سرحد پر فائرنگ کا سلسلہ اب تھم گیا ہے۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here